میرپورخاص ڈویژن میں گیس کی بند ش کے بعد بجلی کا بحران شدت اختیار کر گیا

میرپورخاص ( بیورورپورٹ) میرپورخاص ڈویژن مین گیس کی بند ش کے بعد بجلی کا بحران شدت اختیار کر گیا لوڈ شیڈنگ کا دورانیہ 16 تک پہنچ گیا، عوام نے نئی حکومت سے بھی امیدیں ھار دی عام آدمی کے ساتھ وزیر اعظم نواز شریف کے جان نثار کارکنان نے بھی حکومت کے خلاف شکایتوں کے انبار لگادیئے، گئس اور بجلی کی لوڈ شیڈنگ کے حوالے سے ایوان صحافت میرپورخاص کی ٹیم نے جب سروے کیا تو بجلی اور گئس کی لوڈ شیڈنگ سے عوام بیزا نظر آئی ۔میرپورخاص شہر سمیت ڈویزن بھر میں گئس کی بندش کے بعد بجلی کے بحران نے سخت سردی میں بھی عوام کی چیخیں نکال دی ہیں کاروبار مکمل طور پر تباھ ہوچکا ہے، بجلی پر چلنے والہ کاروبار روزانہ سولہ سولہ گھنٹے کی لوڈ شیڈنگ سے ٹھپ ہوکر رہگیا ہے، یو پی ایس اور جنریٹر ناکام ہونے کے بعد اب لوگ سولر سسٹم کی طرف آرہے ہیں لیکن سولر سسٹم مہنگا ہونے کے باعث خرید وہ فروخت بھی کم ہے۔ نواز حکومت کی جانب سے اچھی کارگردگی نہ ملنے پر عام عوام کے ساتھ اپنے ہی کارکنان ناراض ہیں مسلم لیگ ن کے سینئر کارکن راجہ تنویر سمیت عوام شہریوں نے بجلی اور گئس لی لوڈ شیڈنگ پر سخت برھمی کا اظہار کرتے ہوئے ایوان صحافت کی ٹیم کے سامنے شکووں وہ شکایات کے ڈھیر لگادئے بجلی کی طویل لوڈ شیڈنگ سے پینے کے پانی کا بحران پیدا ہوگیا جبکہ سیوریج پمپنگ مشینیں نہ چلنے کے باعث شہر بھر میں سیوریج کا پانی بھر چکا ہے اور بجلی کی لوڈ شیڈنگ کے باعث آٹے کی چکیاں اور فلور ملز نا چلنے پر عوام کو شدید مشکلات کا سامنا ہے، آرا مشینوں سے لیکر فرج، ٹی وی اور دیگر الیکٹرونک کا سامان فروخت کرنے اور رپئر کرنے والے دکانداروں کا کاروبا ر بھی بری طرح سے ٹھپ ہوکر رہگیا ہے، سول اسپتال میرپورخاص سمیت سرکاری اسپتالوں میں ایمرجنی آپریشن معطل ہوکر رہگئے ہیں گئس کی لوڈ شیڈنگ رھنے پیٹرول مہنگا ہونے پر جنریٹر کا استعمال کم ہونے لگا ہے ، یو پی ایس سسٹم مہنگا اور ناکام ہونے کے باعث عوام نے یو پی ایس کے بجائے سولر انرجی کی طرف توجہ دے رہے ہیں لیکن انکے ریٹس بھی بہت زیادہ ہیں۔ سی این جی اسٹیشنوں میں گئس کی بندش کے باعث بڑے پیمانے پر عملہ بے روزگار ہوکر رہگیا ہے۔ جبکہ ٹرانسپورٹروں نے گئس کی بندش کا بہانہ بنا کر کرایوں میں دگنا اضافہ کردیا ہے۔ گئس نہ ملنے پر گھروں کے چولہے دو ماھ سے ٹھنڈے ہیں جسکے باعث اکثر بچے اسکول بھوکے جاتے ہیں اور لوگ دفاتر بغیر ناشتہ کئے جاتے ہیں۔ کیوں کہ لکڑی اور کوئلا مہنگا ملنے پر لوگ استعمال کرنے سے گریز کر رہے ہیں ، لیکن کیا کریں پاکستان پھر بھی پاکستان ہے، گئس نہیں بجلی نہیں امن نہیں پھر بھی اس ملک غریب اور غیرتمند عوام انہیں ان گھسے پٹے اور کرپٹ سیاستدانوں کو ووٹ دیکر صرف پاکستان کی بقا کے خاطر ہر درد دکھ برداشت کر رہے ہیں۔ نواز حکومت سے عوام نے بہت ساری توقعات رکھی ہوئی تھی لیکن سب کی سب مٹی میں مل گئی۔ ملک بھر کی طرح سندھ کی عوام نے مسلم لیگ ن ، پ پ پ، تحریک انصاف اور دیگر سیاسی جماعتوں پر کمل طور پر بداعتمادی ظاہر کی ہوئی ہے اور کہا کہ اب تو کوئی مسیحا ہی اس ملک کی تقدیر بدل سکتا ہے ، سیاستداوں کی کارگردگی سے وہ مکمل طور پر مایوس ہوچکے ہیں۔ میرپورخاص کی عوام ناممکن ہی سہی پھر بھی اس وقت حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ سندھ کے چوتھے بڑے شہر اور ڈویزنل ہیڈ کوارٹر میرپورخاص کے لئے اور کچھ نہیں دے سکتے تو کم سے کم بجلی اور گئس کی لوڈ شیڈنگ کا دورانیہ کم کرنے کا عرض کیا ہے۔

0 comments

Write Down Your Responses