متاثرین وزیرستان کاورلڈفوڈپروگرام کے تحت ملنے والے راشن کابائیکاٹ کرنیکااعلان کردیا

ڈیرہ اسماعیل خان(شازیہ منیر انوسٹی گیشن ٹیم)متاثرین وزیرستان نے 10جنوری 2014ء سے ملنے والے راشن کابائیکاٹ کرنیکااعلان کردیا۔تفصیلات کے مطابق اکتوبر2009ء میں جنوبی وزیرستان میں شدت پسندوں کیخلاف آپریشن کی وجہ سے وہاں کے رہائشیوں نے ڈیرہ اورٹانک میں نقل مکانی کی تھی۔ان متاثرین وزیرستان کوماہ وارورلڈفوڈپروگرام کے تحت راشن دیاجاتاتھا۔مگر10جنوری 2014ء سے ورلڈفوڈپروگرام کے اعلیٰ افسران نے نئی ہدایات جاری کی ہیں جس کے مطابق راشن انہی لوگوں کودیاجائیگاجن کے نام پرراشن کارڈزہیں اوروہ خودراشن کارڈلیکرراشن حاصل کرسکیں گے۔متاثرین وزیرستان نے اس فیصلے کیخلاف ٹاؤن ہال ڈیرہ میں ایک احتجاجی جرگے کاانعقادکیاجس میں انکے مشران نے اعلان کیاکہ ہم ورلڈفوڈپروگرام کے تحت ملنے والے راشن کابائیکاٹ کرتے ہیں۔کیونکہ یہ جونئی منطق جاری کی گئی ہے کہ راشن لینے والے خودراشن کارڈکے ہمراہ آئینگے یہ ایساکرناناممکن ہے کیونکہ ہماری خواتین راشن لینے نہیںآسکتیں جبکہ اکثرمتاثرین وزیرستان کے سربراہان جن کے نام پرراشن کارڈبنے ہوئے ہیں وہ رزق حصول کیلئے اندرون ملک وبیرون ملک گئے ہوئے ہیں۔اس وجہ سے وہ راشن لینے نہیںآسکتے۔انہوں نے بائیکاٹ کااعلان کرنے کیساتھ ہی بتایاکہ وہ روزانہ کی بنیادپرٹاؤن ہال میں ہی احتجاج کرینگے۔

0 comments

Write Down Your Responses