امتحانات میں نقل صرف پاکستان میں ہی نہیں بلکہ امریکی فضائیہ کے افسران بھی کسی سے پیچھے نہیں ہیں

واشنگٹن(انویسٹی گیشن ٹیم) امتحانات میں نقل صرف پاکستان میں ہی نہیں کی جاتی بلکہ یہ کارنامہ انجام دینے میں امریکی فضائیہ کے افسران بھی کسی سے پیچھے نہیں ہیں۔
 امریکی فضائیہ کی جانب سے جاری کئے گئے بیان میں کہا گیا ہے کہ ملک میں واقع فوجی فضائی اڈوں پر تعینات اہلکاروں میں منشیات کے استعمال کے دوران اس بات کا انکشاف ہوا کہ امریکی ریاست مونٹانا میں واقع مالم اسٹورم کے فضائی اڈے میں تعینات 34 اہلکار معمول کے امتحانات میں نقل کرنے ، ان کی معاونت کرنے، موبائل ایس ایم ایس کے ذریعے قبل از وقت امتحانی نتائج سے آگاہ کرنے میں ملوث ہیں، جبکہ کچھ ایسے اہلکاروں کو بھی معطل کیا گیا ہے جو اس عمل میں ملوث نہیں تھےتاہم انہوں نے اس سارے عمل سے باخبر ہونے کے باوجود حکام کو اس بارے میں آگاہ نہیں کیا۔
امریکی حکام کا کہنا تھا کہ  معطل کئے گئے اہلکاروں میں سیکنڈ لیفٹینٹ سے لے کر کیپٹن کے عہدے تک کے افسران شامل ہیں اور یہ تمام افسران ہنگامی صورت حال میں ایٹمی میزائلوں کو آپریٹ کرنے جیسے اہم ترین کام پر تعینات تھے، ملوث افراد کو فوری طور پر ان کی ذمہ داریوں سے الگ کرنے کے ساتھ ساتھ جوہری ہتھیاروں تک ان کی رسائی بھی ختم کردی گئی ہے اور اب اس ذمہ داری پر تعینات ٹیم سے دوبارہ امتحان لیا جائے گا۔
دوسری جانب امریکی فضائیہ کی وزیر ڈیبورا لی جیمز نے کہا ہے کہ ملک کے جوہری پروگرام کی سیکیورٹی کو کوئی خطرہ نہیں نقل چور اہلکاروں کی موجودگی کا انکشاف ان کے ایٹمی پروگرام کی نہیں چند فضائی اہل کاروں کی ناکامی ہے جسے کسی بھی صورت قبول نہیں کیا جاسکتا۔
واضح رہے کہ گذشتہ ماہ امریکی فضائیہ کے جوہری میزائلوں کے انچارج میجر جنرل مائیکل کیری کو بھی جولائی میں دورہ روس کے دوران  کثرت مے نوشی پر برطرف کر دیا گیا تھا جبکہ جنرل مائیکل کیری کی برطرفی سے چند روز قبل امریکی بحریہ نے بھی جوہری فورس کے منتظم ایک ایڈمرل کو جوا کھیلنے کے الزامات ثابت ہونے پر برطرف کر دیا تھا۔

0 comments

Write Down Your Responses