سرکاری سکولوں پر اربوں روپے کے خطیر فنڈز خرچ کئے جارہے ہیں،تدریسی معیار بھی بلند ہونا چاہئے، عبدالجبار شاہین

فیصل آباد (سلیم شاہ ،چیف انوسٹی گیشن سیل)وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف کے احکامات کی روشنی میں سرکاری سکولوں میں عدم دستیاب سہولیات کی فراہمی پر اربوں روپے کے خطیر فنڈز خرچ کئے جارہے ہیں لہذا تدریسی معیار بھی بلند ہونا چاہئے اس سلسلے میں محکمہ تعلیم کے افسران سکولوں میں طریقہ تعلیم پر ضرور توجہ دیں تاکہ بچوں کو کوالٹی ایجوکیشن فراہم کی جاسکے۔ یہ بات سیکرٹری سکولز ایجوکیشن پنجاب عبدالجبار شاہین نے کمشنر آفس کے کمیٹی روم میں ڈویژن کے چاروں اضلاع میں محکمہ تعلیم کی مجموعی کارکردگی کا جائزہ لینے سے متعلق منعقدہ اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کہی۔ڈی سی اوفیصل آباد نورالامین مینگل،ای ڈی اوز ایجوکیشن شاہدہ سہیل،نسیم زاہد،محمد منشامیو،توقیر شاہ،ڈی اوز مردانہ وزنانہ،ڈی ایم اوز،ڈپٹی ڈی اوز،اسسٹنٹ کمشنر جنرل مہر شفقت اللہ مشتاق اورمحکمہ تعلیم کے دیگر افسران بھی اس موقع پر موجود تھے۔سیکرٹری سکولز ایجوکیشن نے ای ڈی اوز کو ہدایت کی کہ گرلز سکولوں میں ٹائلٹس،چاردیواریاں،بجلی و پانی اور فرنیچر کی فراہمی کے لئے اضلاع کے ڈی سی اوز اور متعلقہ محکموں سے مکمل رابطہ میں رہا جائے تاکہ کوئی سکول ان بنیادی سہولیات سے محروم نہ رہے۔انہوں نے کہا کہ بعض سکولوں میں سکول کونسلزکے فنڈز بھی ڈی سی اوز کی مشاورت سے سکول کی بہتری کے لئے استعمال میں لائے جائیں۔انہوں نے کہا کہ سکولوں میں اساتذہ ‘طلبہ کی حاضری اور تدریسی معیار کو باقاعدگی سے چیک کریں اس مقصد کے لئے ای ڈی اوز سکولوں کی اچانک انسپکشن کریں اور غیر حاضر ٹیچرز کونوکری سے فارغ کردیا جائے۔انہوں نے کہا کہ بورڈ اور محکمانہ امتحانات میں ناقص کارکردگی کے حامل اساتذہ کاکڑا احتساب ہونا چاہئے اس سلسلے میں کسی قسم کا اثرورسوخ خاطر میں نہ لایا جائے۔سیکرٹری سکولز نے کہا کہ وزیر اعلی پنجاب محمد شہباز شریف سکولوں میں بچوں کے داخلہ کو چیک کرانے کے لئے تھرڈ پارٹی سے انسپکشن کرا رہے ہیں لہذا انرولمنٹ مہم کے دوران سکولوں میں داخل ہونے والے بچے کسی صورت ڈراپ نہیں ہونے چاہیں ۔انہوں نے واضح کیا کہ پنجم اور ہشتم کے محکمانہ امتحانات میں نقل کے رحجان کاخاتمہ کرنے کے لئے ڈی ای اوز اور اے ای اوز کو متحرک کریں اوراگر کسی سنٹر پر نقل ہوتی پائی گئی تو متعلقہ علاقے کا ایجوکیشن آفیسر ذمہ دارہوگا۔انہوں نے سوفیصد نتائج کے حصول کے لئے سکول سربراہان کو بچوں کے ہفتہ وار تحریری ٹیسٹ لینے کاپابند بنانے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ میٹرک اورانٹر کے امتحانات میں ہیڈ،سائنس اور کمپیوٹرٹیچرز کوڈیوٹی سے مستثنیٰ رکھنے کے لئے سیکرٹری بورڈز کو تحریر کیاجائے گا تاکہ اساتذہ کی سوفیصد توجہ بچوں کو علم کے زیور سے آراستہ کرنے پر مرکوز رہے۔انہوں نے محکمہ تعلیم کے افسران سے کہا کہ وہ اپنے ذمے ٹاسک کو محنت،لگن اور دیانتداری سے انجام دیں اس سلسلے میں کسی قسم کی کوتاہی،عدم توجہی قطعاً برداشت نہیں کی جائے گی۔ای ڈی اوز نے سکول وزٹس،مختلف بے قاعدگیوں/بے ضابطگیوں اورفرائض سے کوتاہی کے مرتکب تدریسی وغیر تدریسی سٹاف کے خلاف کی گئی کارروائیوں اوراپنے اپنے اضلاع میں محکمہ تعلیم کی مجموعی کارکردگی سے بھی آگاہ کیا۔

0 comments

Write Down Your Responses