مجھے فاخرہ بخاری اور خلیل اکبر سے بچایا جائے ورنہ میں پنجاب اسمبلی کے باہر اپنے بچوں اور بہو کے ہمراہ خود سوزی پر مجبور ہو جاؤں گی، شاہدہ عروج

فیصل آباد( سلیم شاہ ،چیف انوسٹی گیشن سیل ) شہر یار اور کنزہ نے کو رٹ میرج کی میں نے یا میرے سا تھ کسی نے بھی کنزہ کو اغواء نہیں کیا خلیل اکبر اور فا خرہ بخاری نے مجھ پر اغواء کا بے بنیا د مقدمہ درج کروایا ہے ۔ اداکارہ دردانہ رحمان اور نادیہ علی سے تعلق نصر ت کمو کا اور فاخرہ بخا ری کاہے میرا نہیں ۔ ان خیالات کا اظہار شاہدہ عروج نامی بیوہ خاتون فیصل آباد پریس کلب میں نصرت کموکا ، رانا شہباز خاں ، شہریار اور کنزہ اکبر کے ہمراہ مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ فاخرہ بخاری اس کے شوہر خلیل اکبر نے مجھے اغواء کیا اور نامعلوم مقام پر لے جا کر مجھے تشدد کا نشانہ بنایا۔ اور میرے منہ پر پیشاب کیا ۔ انہوں نے کہا کہ یہ بات سچ ہے کہ فاخرہ بخاری کے ساتھ میرے بہت گہرے مراسم بن چکے تھے میرے بیٹے شہریار اور کنزہ اکبر میں محبت ہو گئی اور انہوں نے کورٹ میرج کرلی۔ ایک سوال کے جواب پر شاہد عروج نے بتایا کہ شہریار کنزہ اکبر سے عمر میں ابھی چھوٹی ہے ۔ شہریار کا کمپیوٹرائز ڈ شناختی کارڈ ابھی نہیں بنا جب کہ کنزہ اکبر بی بی اے آنرز کی طالبہ ہے جو یونیورسٹی سے خود شہریار کے ساتھ آئی تھی جس کو خالی ہاتھ میں نے تسلیم کرلیا نہ ہی 60تولے سونا نقدی ساتھ لے کر آئی ہے میں ایک کھاتی پیتی گھریلو خاتون ہوں رانا شہباز خان جس پر قتل اور منشیا ت فروشی جیسے 22مقدمات کے بارے میں شاہدہ عروج نے بتایا کہ میرا بھائی بنا ہوا ہے۔ اور مشکل وقت میں میرا ساتھ دیتا ہے۔ جب کہ نصرت کموکا ایک سیاسی لیڈر ورکر ہے۔ اس کو خواہ مخواہ معاملات میں گھسیٹا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سی پی او کی ہدایات پر انسپکٹر یاسر جٹ نے مجھے پروکے والا سے باز یاب کروایا۔ خلیل اکبر اور فاخرہ بخاری میری جائیداد ہتھیانے کیلئے اس حد تک جا سکتے ہیں مجھے علم نہیں تھا ا س موقع پر کنزہ اکبر نے کہا کہ میں نے اپنی مرضی سے شادی کی ہے مجھے کسی نے اغواء نہیں کیا ۔ نصرت کموکا او ررانا شہباز خاں اور شہریار پریس کانفرنس میں خاموش بیٹھے رہے انہوں نے اپنی صفائی میں کچھ نہیں کہا۔ شاہدہ عروج نے وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف ، چیف جسٹس تصدق حسین جیلانی ، آئی جی پنجاب خان بیگ، آرپی او نواز وڑائچ ، سی پی او ڈاکٹر حیدر اشرف سے مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ مجھے فاخرہ بخاری اور خلیل اکبر سے بچایا جائے ورنہ میں پنجاب اسمبلی کے باہر اپنے بچوں اور بہو کے ہمراہ خود سوزی پر مجبور ہو جاؤں گی۔ 

0 comments

Write Down Your Responses