معروف براڈ کاسٹر ، ادیب اور صحافی رضا علی عابدی کو پی ایچ ڈی کی اعزازی ڈگری آغازکرکے پاکستان کی تمام جامعات پر برتری حاصل کرلی

بہاول پور (ڈپٹی انچارج انویسٹی گیشن ) پروفیسر ڈاکٹر محمد مختار ، وائس چانسلر اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور و گورنمنٹ صادق کالج ویمن یونی ورسٹی بہاول پور کی ہدایت پر معروف براڈ کاسٹر ، ادیب اور صحافی رضا علی عابدی کو پی ایچ ڈی کی اعزازی ڈگری دینے کے لیے قائم کی گئی خصوصی کمیٹی کااجلاس رکن قومی اسمبلی مخدوم سیّد علی حسن گیلانی کی زیرصدارت عباسیہ کیمپس میں منعقد ہوا۔انہوں نے کہا کہ ادب اور صحافت میں رضا علی عابدی کی خدمات بے مثال ہیں اور انہوں نے گزشتہ نصف صدی سے زیادہ اپنی آواز اور لہجے سے سامعین کے دلوں پر راج کیا ہے اور ہر شخص اُن کی صحافتی اور ادبی خدمات کو تسلیم کرتاہے۔ا ہلِ بہاول پور کے لیے یہ بڑے اعزاز کی بات ہے کہ رضا علی عابدی گزشتہ دنوں جامعہ میں تشریف لائے اور انہوں نے یہاں کے طلبہ وطالبات اور اساتذۂ کرام کی دعوت کو پذیرائی بخشی ۔ان کی شان دار صحافتی اور ادبی خدمات کے پیشِ نظر میری اور اجلاس میں شریک معززین کی پُر زور سفارش ہے کہ انہیں جامعہ کی طرف سے ڈاکٹریٹ کی اعزازی ڈگری عطا کی جائے تاکہ وہ پوری دنیا میں اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کے سفیر بن کر اس کی عظمت و شوکت میں مزیداضافہ کریں۔ اجلاس میں بہاول پور کے دانشور ، ادیب اور سول سوسائٹی سے تعلق رکھنے والے ممتازافراد شریک ہوئے۔نامور دانشور ملک حبیب اللہ بھٹہ نے کہا کہ بہاول پور ہمیشہ سے منفرد خطہ رہا ہے اور اُردو کو سب سے بلند مرتبہ اس خطے نے دیا۔ اُردو زبان کی اہمیت کو اُجاگر کرنے میں جناب پروفیسر ڈاکٹر محمد مختار ، وائس چانسلر اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کا کردار بہاول پور کے صادق علم دوست حکمرانوں کی طرح ہے جنہوں نے برصغیر پاک وہند کے مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والے نامور افراد کو انتہائی عزت و احترام بخشا۔انہوں نے کہا کہ ہم وائس چانسلر کی اس تجویز کی مکمل تائید کرتے ہیں۔سیّد تابش الوری نے کہا کہ اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پورنے علمی ، ادبی اور ثقافتی شخصیات کو اعزازی ڈگریاں دینے کے کام کا آغازکرکے پاکستان کی تمام جامعات پر برتری حاصل کرلی ہے ۔ رضا علی عابدی ایک لیجنڈ کی حیثیت رکھتے ہیں اور انہوں نے بین الاقوامی سطح پر پاکستان کا پرچم ہمیشہ بلند رکھاہے۔صنعت کار ڈاکٹر رانا طارق محمود نے کہا کہ رضا علی عابدی نے اُردو ادب کو ریڈیو اور اپنے سفر ناموں کے ذریعے زندہ رکھا ہے اور وہ اب تک اس کوکامیابی سے لے کر چل رہے ہیں۔انہیں ڈگری دینے میں اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کو بھی اعزاز حاصل ہوگا۔ماہر تعلیم سیّد نسیم جعفری نے کہا کہ دنیا کے بہت سے ادارے نامور افراد کو پی ایچ ڈی کی اعزازی ڈگری دیتے ہیں۔ یہ ڈگری حب الوطنی، ادب اور ثقافت کے میدان میں خدمات کے صلے میں دی جاتی ہے اور اعزازی ڈگری دینے کی یہ تجویز پروفیسر ڈاکٹر محمد مختار ، وائس چانسلر اسلامیہ یونیورسٹی کی طرف سے ایک نہایت ہی خوش آئند اقدام ہے۔سول سوسائٹی نیٹ ورک کے چیئرمین سیّد اسرار حسین نے کہا کہ تعلیمی ترقی کے لیے یہ ایک اچھا شگون ہے ۔ رضا علی عابدی نے میڈیا کے لیے جس طرح خدمات سرانجام دیں اس بات کا تقاضا کرتی ہیں کہ ان کو خراجِ تحسین پیش کیا جائے۔ معروف قانون دان مختار فارانی نے کہا کہ قومی زبان کو ترقی اُس وقت نصیب ہوتی ہے جب علاقائی زبانوں کو بھی اُجاگر کیا جائے۔ علاقائی زبانوں کو فروغ دینے میں اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کا کردار بہت نمایاں ہے اور وائس چانسلر نے علاقائی زبانوں کے ادیبوں، شاعروں اور دانشوروں کو بھی اس اعزاز کے قابل سمجھا تو یہ ملک اور وطن کے لیے بہت بڑی خدمت ہوگی۔ڈائریکٹر ریسرچ اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور ڈاکٹر اصغر ہاشمی نے کہا کہ پی ایچ ڈی ایک ایسا اعزاز ہوتی ہے جو کسی کے منفرد کام کو اُجاگر کرتی ہے اور اس کا سوسائٹی پر بہت گہرا اثر ہوتاہے۔اس سلسلے میں رضا علی عابدی کی 1954ء سے لے کر اب تک انٹرنیشنل براڈ کاسٹر کی حیثیت سے جو خدمات ہیں اس کا ثبوت پاکستان کے سارے علاقوں میں ان کی مقبولیت ہے۔ ہماری یونیورسٹی کے لیے بہت بڑا اعزاز ہوگا کہ وہ اس طرح ہمارے ایلومینائی بن جائیں گے۔ اجلاس کے آغازمیں محمد علی ولانہ رجسٹرار، اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور نے کمیٹی کے اغراض ومقاصد بیان کیے اور رضا علی عابدی کو پی ایچ ڈی کی اعزازی ڈگری دینے کی تجویز پیش کی جس کے لیے یونیورسٹی کے دائرہ کار میں موجود ادیب، شاعر، دانشور اور سول سوسائٹی کے نامور افراد سے رائے دینے کی درخواست کی ۔ اجلاس میں کنٹرولر امتحانات امتیاز علی سکھیرا،چیمبر آف کامرس کے نمائندے میاں شاہد اقبال،سیاسی وسماجی شخصیت مخدوم ظفر حسن گیلانی اورماہر تعلیم سعدجعفری بھی شریک تھے۔

0 comments

Write Down Your Responses