ناقص اورخراب بیٹنگ میں گھری پاکستانی ٹیم کو جنوبی افریقی حصار توڑنے کا چیلنج درپیش ہے

کراچی(انویسٹی گیشن ٹیم) ناقص اورخراب بیٹنگ میں گھری پاکستانی ٹیم کو جنوبی افریقی حصار توڑنے کا چیلنج درپیش ہے گرین شرٹس سیریز کے دوسرے اور آخری ٹوئنٹی 20 میچ میں جمعے کو پروٹیز کیخلاف میدان سنبھالیں گے۔
مسلسل چار ناکامیوں نے ٹیم کو شدید دباؤ کا شکارکررکھا ہے، بڑے ناموں کی ساکھ خطرے میں پڑچکی ہے، دوسری جانب جنوبی افریقہ نے مورن مورکل اور پال ڈومنی کو وطن واپس بھجوادیا، حریف کپتان ڈوپلیسی نے آئی سی سی رینکنگ میں ٹاپ پوزیشن کا حصول مقصد قرار دے دیا۔ تفصیلات کے مطابق مشکلات میں گھری پاکستان ٹیم جمعے کو سیریز کے دوسرے اور آخری ٹوئنٹی 20 میچ میں جنوبی افریقہ کیخلاف میدان سنبھالے گی، پروٹیز کے ہاتھوں ون ڈے انٹر نیشنل کرکٹ سیریز میں 1-4 کی شکست فاش کھانے والی پاکستانی ٹیم سخت دباؤ کا شکار ہے، دبئی میں ہونے والے اس میچ میں پاکستان کو ایک مرتبہ پھر اپنی ٹوٹی ہوئی بیٹنگ لائن پر انحصار کرنا پڑے گا، جنوبی افریقہ کی بولنگ کے سامنے بے بس ہو جانے والی پاکستانی ٹیم میں شامل کیے جانے والے اسپیشلسٹ عبدالرزاق اور شعیب ملک پہلے میچ میں متاثر نہ کر سکے اوران سے وابستہ توقعات بھی پوری نہیں ہو سکیں،
جنوبی افریقہ نے پہلے ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل میچ میں پاکستان کو مات دے کر اپنا سکہ جمالیاہے،اننگز میں 100 رنزبھی نہ جوڑ سکنے والی گرین شرٹس کے مقررہ 20 اوورز میں9 وکٹوں پر 98 رنز حریف ٹیم کے لیے آسان ہدف رہا تھا جس نے محض ایک وکٹ گنوا کر 14.3 اوور ہی میں حاصل کرکے سیریز میں 1-0 کی برتری پائی، جمعے کو دوسرے ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل میں پاکستان کی بیٹنگ لائن کو سبکی سے بچنے کے لیے کچھ خاص کر دکھانے کی ضرورت ہوگی، نوجوان احمد شہزاد اور صہیب مقصود کی ناکامی نے کپتان محمد حفیظ کو  مشکل میں ڈال دیا ہے،اگر صہیب کو دوسرے میچ میں آرام دیا گیا تو ناصر جمشید کو قسمت آزمائی کا موقع مل سکتا ہے جبکہ امکان  ہے کہ مڈل آرڈر میں کوئی تبدیلی نہ کی جائے تاہم متاثر نہ کرپانے والے اسپنر عبدالرحمان کو ڈریسنگ روم میں بیٹھنا پڑ سکتا ہے۔
دوسری جانب مکمل فٹ نہ ہونے اور ناقص فیلڈنگ کی وجہ سے امکان ہے کہ طویل قامت فاسٹ بولر محمد عرفان بھی پاکستان الیون کا حصہ نہ بن سکیں گے، ان کی جگہ جنید خان کو موقع فراہم کیا جاسکتا ہے، جنوبی افریقہ کی بولنگ لائن کو  ڈیل اسٹین اور لونوابو ٹسوبے کی صلاحیتوں پر مکمل اعتماد ہے جو حریف ٹیم کے لیے کسی طوفان سے کم نہیں، سری لنکا کے خلاف سیریز میں  فٹنس کی پرابلم میں گھر جانے والے ٹسوبے کا کہنا ہے کہ میری سخت محنت رنگ لا رہی ہے اور بہتر سے بہتر کار کردگی کا مظاہرہ کرنے کی کوشش کروں گا، جبکہ جنوبی افریقہ کے بیٹنگ کے شعبہ کو ہنوز کسی بڑے امتحان سے نہیں گزرنا پڑا،مورن مورکل اور پال ڈومنی کی وطن واپسی کے بعد ہنری ڈیوس کو ہاشم آملا  اورکوئنٹن ڈی کک  کی مدد کرنے کا موقع ملے گا جبکہ مینجمنٹ کی جانب سے اشارہ ملا ہے  کہ اے بی ڈی ویلیئر کو آرام کو موقع دیکر ڈیوڈ وائس کو ٹیم میں شامل کیا جائیگا جبکہ اسپنر عمران طاہر کی جگہ ایرون فانگیسو میدان میں اتر سکتے ہیں۔
علاوہ ازیں جنوبی افریقی ٹی 20 کپتان فاف ڈوپلیسی نے آئی سی سی رینکنگ میں نمبرون پوزیشن کا حصول مقصد بنالیا، مختصر فارمیٹ کے مقابلوں میں اگرچہ ٹیموں کی رینکنگ کوئی زیادہ اہم شمارنہیں کی جاتی ہے لیکن فاف ڈوپلیسی آئندہ برس بنگلہ دیش میں شیڈول ورلڈ کپ کے پیش نظر پاکستان سے سیریز کے دوسرے میچ میں کامیابی کی بدولت رینکنگ میں ٹاپ پوزیشن کے حصول کو اپنی ٹیم کیلیے بہترین خیال کرتے ہیں، انھوں نے کہا کہ ہم گرین شرٹس سے دوسرے ٹی 20 میں نمبرون پوزیشن کو پانے کی بھرپور کوشش کریں گے، ورلڈ کپ سے قبل نمبرون پوزیشن کا مل جانا ہماری ٹیم کے اعتماد میں اضافے کا سبب بنے گی، اگر ہم عالمی درجہ بندی میں پانچویں یا چھٹے نمبر پر ہوں گے تو میگا ایونٹ میں مزہ نہیں آئیگا، اس کا مطلب ہوگا کہ اس فارمیٹ میں ہماری پرفارمنس میں تسلسل نہیں ہے، اگر ہم نمبرون پوزیشن کے ساتھ بنگلہ دیش جاتے ہیں تو پھر اس سے ہماری ٹیم پر اچھے اثرات مرتب ہوں گے، جنوبی افریقہ سردست پانچویں پوزیشن پر براجمان ہے، پاکستان کیخلاف سیریز میں وائٹ واش کی صورت میں انھیں گرین شرٹس کی جگہ دوسری پوزیشن پر قدم رکھنے کا موقع مل سکتا ہے، جمعے کو دبئی میں دوسرے ٹی 20 کے بعد دونوں ممالک آنے والے چند دنوں میں مزید دو ٹی 20 میچز کھیلیں گے، اگر پروٹیز یہ تمام میچز جیتنے میں کامیاب ہوجاتے ہیں تو پھر وہ موجودہ ٹاپ ٹیم سری لنکا کی پوزیشن کو چیلنج کرسکیں گے۔

0 comments

Write Down Your Responses