یوم عاشور کے موقع پر دو گروپوں کے درمیان تصادم کے دوران 8 افراد کی ہلاکت کے بعد شہر میں کرفیو کے باعث ہُو کا عالم ہے۔

راولپنڈی(انویسٹی گیشن ٹیم) یوم عاشور کے موقع پر دو گروپوں کے درمیان تصادم کے دوران 8 افراد کی ہلاکت کے بعد شہر میں کرفیو کے باعث ہُو کا عالم ہے۔
راولپنڈی میں گزشتہ روز یوم عاشور کے موقع پر فوارہ چوک کے قریب دو گروپوں کے درمیان تصادم کے نتیجے میں 8 افراد کے جاں بحق ہونے کے بعد راول ٹاؤن اور پوٹھوہار ریجن میں نافذ کیا گیا کرفیو اب بھی جاری ہے، شہر کی اہم سڑکوں کو کنٹینرز کے ذریعے بند کردیا گیا ہے، راولپنڈی میں موبائل سروس بھی معطل کرنے کے احکامات جاری کر دئیے گئے ہیں۔ پولیس اور رینجرز کے دستے مسلسل گشت کررہے ہیں جبکہ شہر کی فضائی نگرانی بھی کی جارہی ہے۔ لوگوں کو گھروں میں رہنے کی ہدایت کی گئی ہے تاہم نعض مقامات پر عوام کی جانب سے کرفیو کی خلاف ورزی کرنے والے 8 افراد کو حراست میں لے لیا گیا ہے۔ آج اور کل ہونے والے امتحانات اور انٹری ٹیسٹ بھی بند ملتوی کردیئے گئے ہیں۔
کرفیو کی وجہ سے راجا بازار، کالج روڈ، گوالمنڈی، موہن پورہ، گنج منڈی، پرانا قلعہ، بنی سمیت دیگر علاقوں میں علاقہ مکینوں کو شدید مشکلات کا سامنا ہے۔ شہریوں کو خوراک، دودھ اور ادویات کی کمی سامنا بھی کرنا پڑ رہا ہے۔شہر کے تینوں سرکاری اسپتالوں اور ائیرپورٹ جانے والے راستے سیل ہونے سے بھی مشکلات بڑھ رہی ہیں۔
شہر میں پیدا ہونے والی صورت حال کے بعد آئی جی پنجاب راولپنڈی میں ہی موجود ہیں جبکہ چوہدری نثار علی خان کو بھی وزارت داخلہ کی جانب سے بریفنگ دی گئی ہے تاہم کرفیو میں نرمی کا تاحال کوئی فیصلہ نہیں کیا گیا۔

0 comments

Write Down Your Responses