23 نومبر تک ڈرون حملوں کا مسئلہ حل نہ ہوا تو قائد تحریک انصاف عمران خان کی کال پر لبیک کہیں گے

رحیم یار خان(انچارج انویسٹی گیشن سیل ) جوائنٹ سیکرٹری جنوبی پنجاب پاکستان تحریک انصاف محترمہ نزہت طالب نے کہا ہے کہ 23 نومبر تک ڈرون حملوں کا مسئلہ حل نہ ہوا تو قائد تحریک انصاف عمران خان کی کال پر لبیک کہیں گے ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے کوآرڈینیٹر یورپ ٹو کے پی اسمبلی رانا مسعود ایم خان کی جانب سے دئیے گئے عشائیہ کے موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کیا اس موقع پر پاکستان تحریک انصاف پنجاب کی صوبائی نائب صدر محترمہ آصفہ سلیم ، جوائنٹ سیکرٹری پنجاب محترمہ نگہت محمود گجر ، آئی ایس ایف یو کے کے منتظمین حارث خان اورصبا خان بھی موجود تھے انہوں نے کہا کہ آئے دن ڈرون حملے کر کے ہماری قومی خود مختاری کا مذاق اڑایا جا رہا ہے اور پھر یہ بھی کہا جا تا ہے کہ امریکہ پاکستان کی خود مختاری کا بہت احترام کرتا ہے یہ امریکی پالیسی اور اس کے عملی اقدامات کے کھلے تضاد کی ایک عام مثال ہے کہ اس کے قول اور فعل میں فرق پایا جاتا ہے اور ہماری حکومت پاکستان تحریک انصاف کے اصولی فیصلے کی بجائے لیت لعل سے وقت گزار رہی اور تاریخ میں اپنا نام مدت پوری کرنے والے وزیر اعظموں کی لسٹ میں لکھوانے کے لئے قومی مفادات کو نظر انداز کر رہی ہے انہوں نے کہا کہ اگر23 نومبر کو ڈرون حملوں کا مسئلہ حل نہ ہوا تو پی ٹی آئی کے قائد کے حکم پر نہ صرف کے پی کے کے راستوں سے نیٹو سپلائی بند کی جائے گی بلکہ کراچی سے لے کر پورے پاکستان اوردنیا بھر میں پاکستان تحریک انصاف ڈرون حملے رکوانے کے لئے اپنی حکمت عملی سے کام لے گی ۔ اور قائد تحریک انصاف عمران خان جو کہ پہلے ہی کے پی کے حکومت کی قربانی کا کہہ چکے ہیں سمیت کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کریں گے ۔ انہوں نے کہا کہ نیٹو سپلائی روکنے کے لئے پاکستان تحریک انصاف کی کے پی کے حکومت حکومتی مشینری کا استعمال نہیں کرے گی ۔پولیس اور ایف سی اپنا کام کریں گی جبکہ خیبر پختون خواہ کی جانب سے وزیر اعلی کے پی کے پرویز خٹک کریں گے ۔ 

0 comments

Write Down Your Responses