’بلاول بھٹو‘ نے بھی پسند کی شادی کرلی

اسلام آباد (ایم وی این نیوز)اسلام آباد ہائی کورٹ نے ہندو مذہب چھوڑ کر اسلام قبول کر کے پسند کی شادی کرنے والی سکھر کی رہائشی ماریہ کو 25 اگست تک تحفظ فراہم کرنے کا حکم دیا ہے۔جمعہ کو سماعت کے موقع پر ماریہ کے چچا کشن لال بھی عدالت پیش ہوئے اور استدعا کی کہ لڑکی کے والدین سے ملاقات کرائی جائے۔جس پر عدالت نے حکم دیا کہ آئندہ سماعت پر نومسلم 21 سالہ ماریہ کی والدین سے عدالت میں ملاقات کرائی جائے۔ماریہ نے عدالت کو بتایا کہ اپنی مرضی سے مسلمان ہوئی ہوں، کسی نے کوئی دباﺅ نہیں ڈالا، پہلے ہندو مذہب سے تھی اور نام انوشی تھا، ماریہ نے عدالت کے استفسار پر کلمہ بھی پڑھ کر سنایا۔درخواست گزار کے وکیل نے موقف اختیار کیا کہ ماریہ کے شوہر بلاول بھٹو کے خاندان کے خلاف سکھر میں اغوا اور چوری کا مقدمہ درج ہے، بلاول کے خاندان کے 15افراد کو غیر قانونی حراست میں لیا گیا ہے، ماریہ کے چچا نے عدالت سے استدعا کی کہ بچی کو اور دارالامان میں رکھا جائے،ہمارے ساتھ انصاف کیا جائے، ہم بھی پاکستانی ہیں، سماعت کے دوران فاضل جسٹس شوکت عزیز صدیقی نے ریمارکس دیئے کہ کسی بھی مذہب سے تعلق رکھنے والے تمام پاکستانی قانون کی نظر میں برابر ہیں، کاروکاری کا سلسلہ کب بند ہو گا۔یہ اس پاداش میں نہ ماری جائے کہ مسلمان ہو گئی ہے اور پسند سے شادی کی۔عدالت نے کیس کی مزید سماعت 25 اگست تک ملتوی کر دی۔واضح رہے کہ یہ بلاول بھٹو پیپلزپارٹی کے چیئرمین نہیں بلکہ ایک عام شہری ہے۔

,

0 comments

Write Down Your Responses