سرگودھا شہر اور کینٹ کے لوگ دو حصوں میں تقسیم

سرگودھا (انویسٹی گیشن ٹیم) پاکستان مسلم لیگ ن کی حکومت کو 6 ماہ کا عرصہ ہونے کو ہے عوامی خدمت کے نعرے لگا کر برسر اقتدار آنیوالے سرگودھا کے ارکان اسمبلی جو سابقہ دور حکومت میں کچہری والا پھاٹک پل کی تعمیر کو ایشو بناکر الیکشن لڑے اب برسر اقتدار آنے پر انہوں نے بھی پل کی تعمیر سے منہ موڑ لیایہ با ت چوہدری طا رق محمو د گجر امیدوار چیئر مین یوسی 92نے 42جنوبی میں ایک بڑ ے اجتماع سے خطا ب کے بعد میڈ یا کے نما ئندوں سے گفتگو کے دوران کہی انہو ں نے کہا کہ جس کی وجہ سے سرگودھا شہر اور کینٹ کے لوگ عملی طور پر دو حصوں میں تقسیم ہوکر رہ گئے ہیں 22.50 ملین کی لاگت سے اس منصوبے کا آغاز کیا گیا تھا مگر ڈھائی سال سے زائد کا عرصہ گزر چکا ہے پل تعمیر نہ ہوسکاچوہدری طارق محمو گجر امیدوار چیئرمین نے مزید کہا کہ اس کے برعکس لاہور میں میٹرو بس کیلئے شروع کیا جانیوالا منصوبہ مکمل ہوچکا ہے شہریوں کا کہنا ہے کہ میاں شہباز شریف یہ بتائیں کہ کیا یہ پنجاب کا حصہ نہیں ہے جس کے فنڈز روک لئے گئے ہیں ہسپتال ‘ کچہری والا پھاٹک پل‘ لاہور روڈ یہ تین منصوبے سرگودھا کے شہریوں کیلئے وبال جان بن کر رہ گئے ہیں۔

0 comments

Write Down Your Responses